ایک ننھی شعاع کا رنگ ٹپک پڑا

ایک ننھی شعاع کا رنگ ٹپک پڑا
گھر ہی کا پتھر سر پر پٹک پڑا

میرے دل پر دیکھ کیا گزری
کہ سنگ بھی سسک کرلڑھک پڑا

بلبل کی صدا ازل سے بے سبب ٹھہری
بجاۓ عشق محبوب ہی بوجھل پڑا

گاۓ جا، گاۓ جا، یہ کانچ کی بانسری
کون لوہے کے محل میں بجانے چل پڑا

خاک اے سورج محبوب ہوا کہ تو بھی
گرم جوشئ سورج مکھی سے کھل پڑا

جلاۓ دل میں دیا ایک عمر بیتی
یہ آنسو بیقرار جانے کب نکل پڑا

دکھ اپنے مجھے وہ ھبہ کر گئ
وزن سکھ پر اٹھاۓ نہ بن پڑا

Advertisements

Do drop me a line!

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s